بزنس کی اخبار میں تشہیر کرنا

مصنف: اعجاز عالم | موضوع: کاروبار


اخبار میں اپنے کاروبار، مصنوعات یا سروسز کے متعلق اشتہار دینا ایک مروجہ طریقہ ہے جو کہ ساری دنیا میں استعمال ہوتا ہے۔ یہ کم خرچے میں زیادہ لوگوں تک پیغام پہنچانے کا آسان طریقہ ہے۔ چونکہ لوگ روز مرہ کے حالات سے با خبر رہنے کے لیے اخبارات کا مطالعہ کرتے ہیں اس لیے اس میں اپنے کاروبار کا اشتہار مشہوری کے لیے دیا جا سکتا ہے۔

الیکٹرونک میڈیا اور انٹرنیٹ کے استعمال میں اضافے سے چند سالوں سے اخبارات پڑھنے کا رحجان کم ہو رہا ہے۔ اس لیے جدید تقاضوں سے ہم آہنگ ہونے کے لیے آپ اپنے کاروبار کی آن لائن ایڈورٹائزنگ کی طرف زیادہ توجہ دیں۔

اخبار میں اشتہار دینے کے لیے ضروری ہے کہ آپ چند اہم باتیں اپنے ذہن مین رکھیں تاکہ آپ اس سے زیادہ فائدہ اٹھا سکیں۔ پہلے تو آپ نے یہ دیکھنا ہے کہ آپکا کاروبار مقامی نوعیت کا ہے یا اس سے پورے ملک کے لوگ فائدہ اٹھا سکتے ہیں۔

لوکل یا مقامی سطح کے کاروبار کے لیے آپ مقامی اخبار میں اشتہار دیں تو زیادہ فائدے کی توقع کی جا سکتی ہے۔ مثال کے طور پر اگر آپ کا فرنیچر بزنس کراچی میں ہے اور آپ اتوار کو کوئی رعایتی سیل آفر کرنا چاہتے ہیں تو پھر صرف ایسے اخبار میں اشتہار دیں جو کراچی میں زیادہ پڑھے جاتے ہوں۔ تمام بڑے بڑے اخبارات جیسے جنگ، ایکسپریس، خبریں وغیرہ بڑے شہروں سے اپنے الگ الگ ایڈیشن شائع کرتے ہیں۔ اس سے لوگوں کو یہ فائدہ ہوتا ہے کہ ان کو اپنے شہر کی خبریں پڑھنے کو ملتی ہیں اور کاروباری حضرات بھی مقامی مارکیٹ میں اپنی مصنوعات کی تشہیر کر سکتے ہیں۔ اس لیے سب سے پہلے آپ چند بڑے اخبارات میں سے اپنی ضرورت کے مطابق دو، تین اخباریں منتخب کر لیں۔

کلاسیفائیڈ سیکشن میں اشتہارات کم قیمت کے دیے جا سکتے ہیں۔ یہ سطروں کے حساب سے ہوتے ہیں جن میں کم از کم تین سطریں قابل قبول ہوتی ہیں۔ آپکو اس کے لیے اشتہار اس انداز میں لکھنا چاہیئے کہ کم سے کم الفاظ میں آپ اپنا مقصد بیان کر سکیں۔ اسکے ساتھ اپنا رابطہ نمبر، ویب سائیٹ کا پتہ اور دیگر روابط شامل کر سکتے ہیں۔

اگر آپکا بجٹ اجازت دے تو پھر بڑے سائز کے اشتہارات کلاسیفائیڈ اشتہاروں سے زیادہ بہتر ثابت ہوتے ہیں۔ یہ انسانی فطرت ہے کہ وہ بڑے لکھے ہوئے اور رنگین اشتہاروں کی طرف زیادہ راغب ہوتا ہے۔ اس کے علاوہ اشتہار پڑھنے والے لوگ یہ بھی محسوس کرتے ہیں کہ یہ کسی بڑی کمپنی کا اشتہار ہے اور اس پر زیادہ اعتماد کیا جا سکتا ہے۔

یہ کوئی ضروری نہیں کہ آپ اپنے کاروبار کی تشہیر شروع ہی سے بڑے سائز کے اشتہاروں سے کریں۔ اگر کاروبار نیا ہے تو چھوٹے اشتہارات دیجئے اور پھر ان کا رسپانس دیکھئے۔ اگر ان کی مدد سے سیل ہو جائے تو اس میں سے کچھ رقم بچا کر اسے بڑے اشتہاروں کے لیے مختص کر دیں۔ عام دنوں سے زیادہ اتوار اور دیگر تعطیلات کے دن اشتہاروں پر زیادہ اچھا رسپانس ملتا ہے۔

بڑی اور مشہور اخباروں کے علاوہ کچھ چھوٹی اور لوکل سطح والی اخبارات کو بھی ضرور آزمائیے۔ ان کے اشتہار کی قیمت انتہائی کم ہوتی ہے اور بعض اوقات انکا رسپانس بڑی اخبارات سے بھی بہتر ہوتا ہے۔لیکن یہ سب آپکی مصنوعات، سروسز اور اشتہار کے انداز پر منحصر ہوتا ہے۔

بہتر ہے کہ آپ کسی ایڈورٹائزنگ ایجنسی سے رابطہ کر لیں۔وہ آپ سے اشتہارات کے لیے اخبار کے ریٹ کے مطابق ہی پیسے چارج کریں گے اور بعض صورتوں میں آپ کو رعایت بھی دیں گے۔ اس طرح آپ اشتہار ڈیزائن کروانے کی زحمت سے بھی بچ جائیں گے اور آپکا وقت بھی ضائع نہیں ہو گا۔


Share

Karobar ki Akhbar Mein Advertising Krna

Akbar mein apne karobar, masnooaat ya services ke mutaliq ishtehar dena aik aisa tariqa hai jo sari dunya mein istemaal hota hai. Ye kum kharche mein zyada logon tk apna pegham ponchane ka asan tariqa hai. Choonke log roz mara ke halaat se ba-khabar rehne ke liye akhbarat ka mutalea krte hein is liye is mein apne karobar ki mash-hoori ke liye ishtehar dia ja sakta hai.

Electronic media or internet ke istemal ke izafe se guzishta chand salon se akhbarat parhne ka rohjan kum ho raha hy. Is liye jadeed taqazon se hum ahang hone ke liye aap akhbar ke ilawa apne karobar ki online advertising ki taraf bi tawajo dein.

Akhbar mein advertising krne se pehle aap chand zaroori batein apne zehan mein rakhein ta-ke aap apni advertising se zyada faida utha sakien.

Phele to aap ne ye dekhna hy ke aap ka karobar muqami noiat ka hy ya is se poore mulk ke log faida utha sakte hein. Local ya muqami satah ke karobar ke liye aap muqami akhbar mein ishtehar dein to zyada faide ki towaqo ki ja sakti hai. Misal ke tor per agar aap ka furniture business Karachi mein hai or aap itwar ko koi reaati sale offer krna chate hein to phir siraf aise akhbar mein ishtehar dein jo Karachi mein zyada parhe jate hein.

Tmam barhe barhe akhbarat jese Expree, Jang, Khabrain waghaira barhe shehron se alag alag edition shaya krte hein. is se logon ko ye faida hota hai ke un ko apne sheher ki khabrain parhne ko milti hein or karobari hazraat bi apni masnooaat ko apne sheher mein advertise kr sakte hein. Is liye aap sub se pehle barhe or zyada parhe jaane wale akhbarat mein se apni zaroorat ke mutabiq 2-3 akhbar muntakhib kr lein.

Akhbarat ke classified ad ke section mein istehar kum qeemat ke diye ja sakte hein. Ye satron ke hisab se hote hein jis mein kum se kum 3 satrein qabool ki jati hein. Is ke liye aap ko apna istehar is tariqe se likhna chayei ke kum se kum alfaz mein aap apna maqsad byan kr sakein. Is ke sath apna rabta number, website ka address or deegar rawabit dene lazmi hote hein.

Agar aap ka budget ijazat de to phir barhe size ke ishtehar classified ishteharon se bohat behtar sabit ho sakte hein. Ye insani fitrat hai ke wo barhe size ke rangeen ishteharon ki taraf zyada raghib hota hai. Is ke ilawa ishtehar parhne wale log ye bi mehsoos krte hein ke ye kisi barhi company ka ishtehar hai or is per zyada ihtmad kia ja sakta hai.

Ye koi zaroori nai ke aap apne karobar ki advertising shuru mein hi barhe ishteharon se krein. Agar aap ka karobar nya hai to chote ishteharat dijie or in ka response dekhein. Agar inki madad se sale ho jae to is mein kuch raqam bacha ker barhe ads ke liye mukhtas kr dejie. Aam dinon ke banisbat itwar or chuti ke deegar dinon mein ishteharon per behtar response milta hai.

Bari or mashhoor akhbaron ke ilawa, choti or local satah wali akhbarat ko bi zaroor aazmaye. In ke ishtehar ki qeemat intihai kum hoti hai lekin kabhi kbhar response barhi akhbaron se bohat behtar hota hai. Lekin ye sub aap ki masnooaat, services or ishtehar dene ke andaz per bi munhasir hota hai.

Behtar hai ke aap kisi advertising agency se rabta kr lein, wo aap se ishteharat ke liya akhbar ke rate ke mutabiq hi paise charge krein ge or ba'az soorton mein to aap ko reaaet bi dein ge. Is tra aap ishtehar design karwane ki zehmat se bach jaein ge or aap ka waqat bi zaya nai ho ga.

You May Also Like

  • Apne Krobar ki Online Advertising Kijie
  • Apne Karobar ki Advertising Kese Krein?
  • Add Your Thoughts